Why We Teach Mathematics?

A professor of mathematics, was asked a question everyone was racking their brain about: “Where will I ever use all these sines, cosines, integrals, and the rest from algebra and geometry?” Unlike the majority of his colleagues, a wasn’t confused and named 5 reasons why math is important.

ایک پروفیسر نے اپنے دوستوں سے سوال کیا کہ کیا کوئی زندگی کا کوئی ایسا مرحلہ ہے جہاں ہم یہ سارے ریاضی کے فارمولے استعمال کرتے ہوں۔زیادہ تر دوستوں کو اس کا جواب نہ آیا لیکن ایک دوست نے اس کا بہت اچھے طریقہ سے جواب دیا۔اور ریاضی کے پانچ فائدے بتائے جو درج ذیل ہیں۔۔

 

7248710-150279-0-1476715566-1476715573-0-1476943463-0-1476961022-1476961025-650-9ef4c38e4c-1-1477035084

And not just admit it but also move forward to finally solve the impossible task.

ریاضی آپ کو اپنی غلطی تسلیم کرنے کا سبق دیتا ہے۔

For example, Akram and Hamza are standing in front of an equation written on the blackboard. Akram is sure that the equation is correct, and Hamza knows for sure it’s wrong. The next hour sees these two сhange places: Akram believes the equation is wrong, while Hamza stamps his feet and calls Akram an idiot. Sounds like fiction? But mathematicians face such situations almost every day.

مثال کے طور پر اگر دو ستوں ایک سوال کے بارے میں بات کر رہے ہوں اور ان میں سے ایک بولے کہ یہ سوال ٹھیک ہے اور دوسرا بولے کہ غلط ہے۔تو ریاضی کی پڑتال سے ان میں سے ایک کو یہ تسلیم کرنا پڑے گا کہ وہ غلطی پر ہے۔اور ریاضی میں اس قسم کے باتیں روز ہوتی رہتی ہیں۔

Ask any teacher what should you do if the task cannot be solved, and the answer will be simple: “Start from the beginning, and try to go another way. And don’t worry about the mistake you made because it was the thing that eventually showed you the right path.

اگر آپ کسی استاد سے یہ سوال کریں کہ میرے سے یہ مسلہ حل نہیں ہو رہا تو یقینا وہ یہی جواب دے گا کہ دوبارہ شروع سے کوشش کرو اور اس بات کی فکر نہ کرنا کہ غلطی ہو جائے گی۔بلکہ یہ ہی وہ چیز ہے جو آپ کو درست جواب تک لے کر جائے گی۔

7248610-02-0-1476715842-0-1476880587-1476880591-0-1476944071-0-1476961161-1476961165-650-9ef4c38e4c-1-1477035084

Precision is the politeness of mathematicians. This statement is really hard to argue with because every term and phenomenon has a precise and clear definition.

Remember teachers making us learn by heart every definition of geometrical figures or, for example, Pythagoras’s theorem? We had no idea where or when we would use this knowledge. But let’s think — do we always say words without a moment’s hesitation as to their meanings? Would you be able to answer in a heartbeat what is happiness or love? Would your answers match those of your nearest and dearest? And more importantly, would you be able to name a thing that doesn’t have an exact definition?

7248660-03-0-1476715997-1476716003-0-1476944389-0-1476961395-1476961399-650-9ef4c38e4c-1-1477035084

Solving mathematical tasks is like playing chess. Every wrong or careless move can cause disastrous consequences.

How often, when doing your algebra homework, have you ended up in a deadlock because you put “minus“ instead of ”plus”? Even the smallest mistake can ruin everything and become a real obstacle on your way to a cherished dream. Math teaches us to be attentive and responsible for what we do. It isn’t a small thing, is it?

بہت دفعہ آپ نے یہ تجربہ کیا ہو گاکہ آپ کسی سوال کو حل کر رہے ہوں اور آپ کا سوال کسے پوائنٹ پر آکر روک جاتا ہے اور آپ کے پاس پھر کوئی اپشن نہیں ہوتی بلکل کسی کمپیوٹر گیم کی طرح۔ جب آپ اس کو دوبارہ دیکھتے ہیں تو آپ کو پتہ چلتایے کہ آپ نے نفی کی جگہ جمع کا نشان لگا دیا تھا اس وجہ سے آپ کا سوال غلط ہو گیا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ ریاضی ہمیں حاضر دماغی اور ذمہ داری کا سبق دیتا ہے اور یہ کوئی چھوٹی بات نہیں۔

7248810-04-0-1476716181-1476716204-0-1476944809-0-1476961651-1476961655-650-9ef4c38e4c-1-1477035084

“What I state now is false“ — that’s how a famous ”liar’s paradox” sounds. It’s the best description of everything that’s going on in modern science.

There are lots of theorems, rules, and axioms that used to be considered correct, but now they’re not. And this means we shouldn’t blindly trust even the most authoritative opinion until we check it out ourselves. Scientists call it “reasonable skepticism,” and math teaches this very well.

آپ نے اپنی تعلیم کے دوران بہت سے ایسے قانون اور فارمولے بھی پڑھے ہوں گے جو درست جانے جاتے تھے لیکن بعد میں ثابت ہوا کہ وہ غلط ہیں اور اب ان کا کوئی وجود نہیں۔اس کا یہ مطلب ہوں کہ ہم کسی پر اندھا یقین نہیں کر سکتے جب تک کہ ہم اس کو خود اس کی پڑتال نہ کر لیں۔ اور یہ بھی ریاضی کا ہی بہت بڑا سبق ہے۔

7248760-05-0-1476716450-1476716460-0-1476943441-0-1476960808-1476960812-650-9ef4c38e4c-1-1477035084

Because if you don’t solve a task, someone else will surely do it. So why not become the first?

میرے خیال سے ریاضی کا یہ سب سے اہم فائدہ ہے کہ اگر کوئی مسلہ حل نہیں ہو رہا تو تقینا کوئی نہ کوئی تو اس کو حل کرے گا۔تو میں کیوں نہں۔یعنی ریاضی یہ جزبہ پیدا کرتا ہے کہ اسے پہلے کہ کوئی اور اس کام کو کرے میں اس کو حل کروں گا۔اور دنیا اس کو مقابلہ کہتی ہے جو کہ بہت ہی ضروری ہے انسان کے لیے۔

اگر آپ میری اس کاوش کو کار آمد سمجھتے ہیں تو شیئر ضرور کرنا۔تاکہ تعلیم کا یہ سلسلہ چلتا رہے شکرہہ

If you like this post Please Share it..Thanks.

(Visited 699 times, 1 visits today)
Give someone a reason to smile.
15 pairs of animals who look like siblings

Comments

comments

2 thoughts on “Why We Teach Mathematics?

  1. Matha ka ek or sab se bara sabak or bhi sun len
    Math sary ka sara 2 chezon pe chalta hy
    1 farmulas
    2 values
    Values ko kisi na kisi farmuka men put kia jata hy or usy solve kar k ek answer nikal lia jata hy
    Bil kul isi tara hamari zindgi ka bhi ek farmula hy hy or wo hy
    Kalma
    Or values hen wi hen daily life ki activities
    Hum ager apni life ki poori activities is formula men put kar den or isi formula k teht solve karen to hamari life ka anser theak nikal aata hy warna hamaru life ka answer sahi naheen nikalta

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *